Posted by: prastut | जून 1, 2007

Urdu to Hindi or English Transliteration


Since Urdu and Hindi are grammatically same language and they also share a very good number of words, its easier for both speakers to understand each others’ language. The only obstacle is the script. Pakistan chose Arabic script instead of Devnagari for Urdu. And the script does not transliterate well into Hindi or probably roman too.

Here is a modest try to convert Urdu text into Hindi. It’s no where closer to being perfect but may be this is first step.

Go to: http://bhomiyo.com/XLiteratePage.aspx
Enter an Urdu site: http://www.voanews.com/urdu/
Select “Urdu to Hind” in the Language drop down. And click GO.

If you know Urdu letters and somewhat Hindi you can help me out developing a transliteration logic. OR you can give me a map of URDU letters to ENGLISH letters and I can do the rest.

If you have any comments regarding the topic, please post it here to have everything at one place.

You can read following blog where there are few more comments on the topic:
http://hindi.rcmishra.net/2007/05/blog-post.html


Responses

  1. मिश्र जी ने सही जांच परख कर एक अच्छी पोस्ट लिखी है. मेरा मानना है कि मील का पहला पत्थर पड़ चुका है और अब मंजिल कुछ ही चरणों में मिलने वाली ही है.

    बधाई व धन्यवाद. कुछ और प्रयासों से यह काम लायक तो बन ही जाएगा.

    एक कड़ी है – यहाँ पर हिन्दी से उर्दू ट्रांसलिट्रेशन औजार बनाया है. इसके विकास कर्ता से संपर्क कर सकते हैं और भोमियो में हिन्दी से उर्दू ट्रांसलिट्रेशन भी डाल सकते हैं.

    अंग्रेजी रोमन से हिन्दी के लिए मैंने आपसे पूर्व में ही निवेदन कर ही दिया है.🙂

  2. HI EVERYONE,
    i just saw a website which converts english fonts to hindi….site name is quillpad…so if anybody of u interested than go through this link…http://quillpad.in/new/quill.html

  3. hope you will be fine

  4. Hello there.
    Just found your site. Great job!
    I like it much.
    look here http://live.com

  5. जो भिखारी ज थवु होय तो ऐवा
    भिखारी थवु के दाता ( प्रभु ) ने पण भीख माँ लई ले ……………………

  6. जो भिखारी ज थवु होय तो ऐवा
    भिखारी थवु के दाता ( प्रभु ) ने पण भीख माँ लई ले ……………………

  7. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  8. Arzz kiya hai..
    ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  9. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  10. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل
    جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی
    isska matlab pata ho to tulicaaggarwal@yahoo.co.in par send kare

  11. i want to translate these lines in hindi plz help me
    ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  12. Hi every one. how are you? hope that you are all fine there. i want to know about urdu translate . cn any one help me here?

  13. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

    translate in english or hindi plz

  14. please provide a software that converts hindi text to english

  15. i want to a software or dictonary
    to convert english to hindi

  16. . Aur lotus temple ke ander itni shanty thi ki koi bhi 2min ke liye akhe band kare to so jaye. Uske baad hum log hotel wapas aa gaye ham sab fresh hue aur phir samne ek shopping mall me shopping karne gaye waha hamne khub sari dress li aur mene toys bhi liye aur phir hamne us shopping mall me snack kahaya ham waha bhaut der tak ghumhe aur phir raat ho gai to hum wapas hotle chale gaye waha hamne khana khaya aur phir thodi baat karke sone chale gaye. Ham subha naha ke tyeyar hoke lal kila dekhne gaye waha pe sab lal hi tha hum upper sidi chadkar gaye hamne waha phele ki chije dekhi jese banduk, kapde, stachue kuch purane logo ke, Bandar dheke, jis train se Gandhi ji pune gaye the wo train dekhi, jadui hath dekhe. Phir ham ek cmisium gaye waha Gandhi ji ke bare me bhut kuch jana aur waha Gandhi ji ne jaha akhir baar kadam rakha tha wo jagha bhi wahi thi aur chkra bhi dekha phir sham ho gai thi tab hum log India gate gaye waha ka nazara bhaut hi achha tha waha raat ko mashal bhi jalayi gai thi indai gate pe jo likha tha hamne wo bhi dekha aur mene jo phele jamane me picture dehkte the usse picture bhi dekhi. Uske baad humne iron kila bhi dekha aur bhuat jagha ghume aur hum pakila market bhi gaye wo under ground me bana tha. Raat ho gai thi hum metro train me bhi bhete. Meri man pasand jagha thi appughar ka bhaut bagla aur indai gate. Aur mujhe waha ka croud achha nhai laga. And usko kaam karne ke liye me kuch nahi kar sakti thi.

  17. the subject which is writen by deepika plzz translet it in hindi

  18. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  19. please convert these lines into hindi….

    ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  20. chalti to he nai.

  21. hi

  22. deepika r u on line

  23. و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  24. can u plz offord a software thats convert hindi or english to philipins language

  25. we are not english speaking

  26. I have only one comment to make regarding the statement made by writer of above article. Statement is “Pakistan chose Arabic script instead of Devnagari for Urdu”. I just want to say following :
    1. Urdu does not use “Arabic script” . It uses Persian script.
    2. Persian was script of urdu much before pakistan was formed.
    So please cross check the facts before making any statement.

  27. I tried translating it out; but there’s a bit of garbled letter-forms plus my limited vocabulary in Urdu (haven’t read higher-end stuff in quite a bit of time) and the fact that I don’t have a feroze-e-loghat handy on me meant that this English translation is the closest I can achieve in a short time. You can say the following is an educated guess at the meaning of the Urdu text written above:

    This is the best religious poem among all I’ve encountered in my life; in which the Prophet’s Mahraj is depicted. It praises the Prophet and verifies his experience; as well as states that it is the wise people of the world who have kept the world in a holding pen. The correct people will, during the Day of Judgement, be successful in overthrowing the rulers of this world and going forward will alter the world and possibly in this manner even cause the world to come to an end.

  28. Also Imran,
    You’re not entirely correct. The script Urdu is written in, known these days as Nastaliq, is an adaptation of the Persian script to suit the Urdu language. This nastaloq has been in relatively wide usage in the Muslim strata and the upper non-Muslim strata of Hindustani society since about the 17th Century.
    The Devanagri script that Hindi is written in is an adaptation of the Gupta script, arising roughly in the 13th century.
    Nastaliq was used to address the defeciency in Devanagari that it used agglutinative alphabets, which have a tendency to lead to excessive complexity in learning to read and write.
    Nastaliq has the benefit of being able to combine letters without creating new shapes for learners to have to memorize; and also of trying to shape its letters such that they mimic the shape of your mouth when you say the letters.
    Hence it is easier to become literate in Nastaliq than it is to become literate in Devanagri.

    Pakistan and India are relatively recent formations, with the concept of India being circa 160 years old and the concept of Pakistan being circa 90 years old. Trying to assign one language to a country is denying years of history; and a history forgotten implies mistakes will be repeated.

  29. i want hindi font translate to english or english translate to hindi

  30. Sir,

    I want to Urdu translate to English.
    Kindly give me advise, any software
    or urdu message send to you for
    converting into English.

    Best regards,
    MOHAMAMD
    FROM PAKISTAN

  31. i still love u!! but never expected this

  32. ]تلاش ے ایک ایسے دوست کی مجھے۔ جو کرے مجھ سے اپنے دل کی باتیں ساری[ ۔جو رکھے مجھے اپنے دل میں ارمانوں کی طرح میرے ہی خیالوں میں گزار دے راتیں ساری ۔ سمجھے میری بے چینی میرے دکھ درد کو۔ جو مجھ پر نچھاور کر دے چھاتیں ساری ہر وقت جو کرے میرے میرے نام کا ورد میری ہی نام سے وابستہ ہوں جس کی چاہتیں ساری روٹھے نہ کبھی وہ مجھ سے میری خطا پر بھی جو میرے نام کر دے الفتیں شاری۔ رکھے جو مجھے اپنے دل میں سکوں کی طرح میرے ہی خیالوں میں گزاردے شامیں ساری فقط ہی سوچ کر چپ ہو جا تا ہو ۔کہ کس سے کروں یہ باتیں ساری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  33. please provide a software that converts hindi text to english

  34. tanmay uy

  35. Hey, is the author around. Would really like to see the transliteration s/w, but the bhoomiyp site seems dead.

  36. Using the link u can translate hindi font into various languages including enslish and urdu.

    Download the Babylon diccionary from the following link.

    http://www.babylon.com/redirects/download.cgi?type=2203

  37. We need an urdu to english convertor.
    Please reply asap….

  38. tum mujh ko janti ho

  39. Hindi Se Urdu Mai Type change Karne kai Liye Koi Translatter Hai

  40. Plz translate this for me ”
    ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می “کی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی”

  41. new user

  42. Dear Sir,

    Greetings,

    I want to translate some artilce from Urdu to Englsih mean Urdu to English convertor.

    Kindly give me advise for any software or urdu message send to you for converting into English.

    Awaiting your soonest reply

    Thanks
    Iftekhar

  43. I want a program to traslate Urdu to English.
    If there is Urde voice recognition progam, it will still better. Just waiting for answer.
    Kadir

  44. try this link for english – urdu transliteration http://apniurdu.com/Transliterate.html

  45. hii, i have got a speaking oral urdu exam!!!!n i need all the help i can get so plz, if anyone knows any good sites then please let me know!!

  46. dfgdfgdfgdhgdh

  47. amirsany: دست بند سبز نشانه اتحاد ماست…درست است كه ما رسانه ملي را در اختيار نداريم،اما…! هر ايراني يك ستاد،هر شهروند يك همراه،همراه شو عزيز كين درد مشترك هرگز جدا جدا درمان نمي شود. فقط مير حسين… مدير بحران

  48. please convert english name anisha to hindu spelling thank you

  49. HINDI TO ENGLISH

  50. ریختے کے تم ہی استاد نہیں ہو غالب

  51. ریختے کے تم ہی استاد نہیں ہو غالب plz convert to english

  52. Brown will be sentenced on Aug. 5, but the terms of the plea deal call for him to serve five years of formal probation and six months — roughly 1,400 hours — of community labor. Brown will be able to complete his probation in his home state of Virginia; he will have to do either graffiti removal or roadside cleanup for his service.

  53. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی
    translat these line in hindi aur english

  54. ی میری زندگی کی اولین نعت ی نعت می ن حضور ک واقع معرج ک سلسل می لکی اس می ، می حضور کی تعریف کرت
    و اور ان کی عظمت بیان کرتا و اور ساتی اس دنیا کی ب سباتی بی ک کیای سمجدار لوگ ی جو اس دنیا کو ایک قید خان س ب کر امیت ی دیت یی لوگ صحیح مانو می روز قیامت ک دن کامیاب و گ یعنی بادشا و گ الل ن اس دنیا کو ورث می فانی زمان دی ی جو آت اور چل جات ی اسی طرح ایک دن زمین بی ختم و جا گی

  55. Mirza Ghalib’s Ghazal in Urdu

    الف

    نقش فریادی ہےکس کی شوخئ تحریر کا
    کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا
    کاوکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
    صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا
    جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے
    سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا
    آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
    مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا
    بس کہ ہوں غالبؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا
    موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا

    جراحت تحفہ، الماس ارمغاں، داغِ جگر ہدیہ

    مبارک باد اسدؔ، غمخوارِ جانِ دردمند آیا

    جز قیس اور کوئی نہ آیا بروئے کار

    صحرا، مگر، بہ تنگئ چشمِ حُسود تھا

    آشفتگی نے نقشِ سویدا کیا درست

    ظاہر ہوا کہ داغ کا سرمایہ دود تھا

    تھا خواب میں خیال کو تجھ سے معاملہ

    جب آنکھ کھل گئی نہ زیاں تھا نہ سود تھا

    لیتا ہوں مکتبِ غمِ دل میں سبق ہنوز

    ڈھانپا کفن نے داغِ عیوبِ برہنگی

    میں، ورنہ ہر لباس میں ننگِ وجود تھا

    تیشے بغیر مر نہ سکا کوہکن اسدؔ

    سرگشتۂ خمارِ رسوم و قیود تھا

    کہتے ہو نہ دیں گے ہم دل اگر پڑا پایا

    دل کہاں کہ گم کیجیے؟ ہم نے مدعا پایا

    عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا

    درد کی دوا پائی، درد بے دوا پایا

    دوست دارِ دشمن ہے! اعتمادِ دل معلوم

    آہ بے اثر دیکھی، نالہ نارسا پایا

    سادگی و پرکاری، بے خودی و ہشیاری

    حسن کو تغافل میں جرأت آزما پایا

    غنچہ پھر لگا کھلنے، آج ہم نے اپنا دل

    خوں کیا ہوا دیکھا، گم کیا ہوا پایا

    حال دل نہیں معلوم، لیکن اس قدر یعنی

    ہم نے بار ہا ڈھونڈھا، تم نے بارہا پایا

    شورِ پندِ ناصح نے زخم پر نمک چھڑکا

    آپ سے کوئی پوچھے تم نے کیا مزا پایا

    ہے کہاں تمنّا کا دوسرا قدم یا رب

    ہم نے دشتِ امکاں کو ایک نقشِ پا پایا

    دل میرا سوز ِنہاں سے بے محابا جل گیا

    آتش خاموش کی مانند، گویا جل گیا

    دل میں ذوقِ وصل و یادِ یار تک باقی نہیں

    آگ اس گھر میں لگی ایسی کہ جو تھا جل گیا

    میں عدم سے بھی پرے ہوں، ورنہ غافل! بارہا

    میری آہِ آتشیں سے بالِ عنقا جل گیا

    عرض کیجئے جوہرِ اندیشہ کی گرمی کہاں؟

    کچھ خیال آیا تھا وحشت کا، کہ صحرا جل گیا

    دل نہیں، تجھ کو دکھاتا ورنہ، داغوں کی بہار

    اِس چراغاں کا کروں کیا، کارفرما جل گیا

    میں ہوں اور افسردگی کی آرزو، غالبؔ! کہ دل

    دیکھ کر طرزِ تپاکِ اہلِ دنیا جل گیا

    شوق، ہر رنگ رقیبِ سروساماں نکلا

    قیس تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا

    زخم نے داد نہ دی تنگئ دل کی یارب

    تیر بھی سینۂ بسمل سے پَرافشاں نکلا

    بوئے گل، نالۂ دل، دودِ چراغِ محفل

    جو تری بزم سے نکلا، سو پریشاں نکلا

    دلِ حسرت زدہ تھا مائدۂ لذتِ درد

    کام یاروں کا بہ قدرٕ لب و دنداں نکلا

    اے نو آموزِ فنا ہمتِ دشوار پسند!

    سخت مشکل ہے کہ یہ کام بھی آساں نکلا

    دل میں پھر گریے نے اک شور اٹھایا غالبؔ

    آہ جو قطرہ نہ نکلا تھا سُو طوفاں نکلا

    ۔۔۔۔۔

    نسخۂ حمیدیہ میں مزید شعر:

    شوخئِ رنگِ حنا خونِ وفا سے کب تک

    آخر اے عہد شکن! تو بھی پشیماں نکلا

    دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا

    “عشقِ نبرد پیشہ” طلبگارِ مرد تھا

    تھا زندگی میں مرگ کا کھٹکا لگا ہوا

    اڑنے سے پیشتر بھی، مرا رنگ زرد تھا

    تالیفِ نسخہ ہائے وفا کر رہا تھا میں

    مجموعۂ خیال ابھی فرد فرد تھا

    دل تاجگر، کہ ساحلِ دریائے خوں ہے اب

    اس رہ گزر میں جلوۂ گل، آگے گرد تھا

    جاتی ہے کوئی کشمکش اندوہِ عشق کی !

    دل بھی اگر گیا، تو وُہی دل کا درد تھا

    احباب چارہ سازئ وحشت نہ کر سکے

    زنداں میں بھی خیال، بیاباں نورد تھا

    یہ لاشِ بے کفن اسدؔ خستہ جاں کی ہے

    حق مغفرت کرے عجب آزاد مرد تھا

    شمار سبحہ،” مرغوبِ بتِ مشکل” پسند آیا

    تماشائے بہ یک کف بُردنِ صد دل، پسند آیا

    بہ فیضِ بے دلی، نومیدئ جاوید آساں ہے

    کشائش کو ہمارا عقدۂ مشکل پسند آیا

    ہوائے سیرِگل، آئینۂ بے مہرئ قاتل

    کہ اندازِ بخوں غلطیدنِ*بسمل پسند آیا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    * اصل نسخۂ نظامی میں ’غلتیدن‘ ہے جو سہوِ کتابت ہے

    10۔

    دہر میں نقشِ وفا وجہ ِتسلی نہ ہوا

    ہے یہ وہ لفظ کہ شرمندۂ معنی نہ ہوا

    سبزۂ خط سے ترا کاکلِ سرکش نہ دبا

    یہ زمرد بھی حریفِ دمِ افعی نہ ہوا

    میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں

    وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا

    دل گزر گاہ خیالِ مے و ساغر ہی سہی

    گر نفَس جادۂ سرمنزلِ تقوی نہ ہوا

    ہوں ترے وعدہ نہ کرنے پر بھی راضی کہ کبھی

    گوش منت کشِ گلبانگِ تسلّی نہ ہوا

    کس سے محرومئ قسمت کی شکایت کیجیے

    ہم نے چاہا تھا کہ مر جائیں، سو وہ بھی نہ ہوا

    مر گیا صدمۂ یک جنبشِ لب سے غالبؔ

    ناتوانی سے حریف دمِ عیسی نہ ہوا

    نسخۂ حمیدیہ میں مزید:

    وسعتِ رحمتِ حق دیکھ کہ بخشا جاۓ

    مجھ سا کافرکہ جو ممنونِ معاصی نہ ہوا

    11۔

    ستایش گر ہے زاہد ، اس قدر جس باغِ رضواں کا

    وہ اک گلدستہ ہے ہم بیخودوں کے طاقِ نسیاں کا

    بیاں کیا کیجئے بیدادِکاوش ہائے مژگاں کا

    کہ ہر یک قطرہء خوں دانہ ہے تسبیحِ مرجاں کا

    نہ آئی سطوتِ قاتل بھی مانع ، میرے نالوں کو

    لیا دانتوں میں جو تنکا ، ہوا ریشہ نَیَستاں کا

    دکھاؤں گا تماشہ ، دی اگر فرصت زمانے نے

    مِرا ہر داغِ دل ، اِک تخم ہے سروِ چراغاں کا

    کیا آئینہ خانے کا وہ نقشہ تیرے جلوے نے

    کرے جو پرتوِ خُورشید عالم شبنمستاں کا

    مری تعمیر میں مُضمر ہے اک صورت خرابی کی

    ہیولٰی برقِ خرمن کا ، ہے خونِ گرم دہقاں کا

    اُگا ہے گھر میں ہر سُو سبزہ ، ویرانی تماشہ کر

    مدار اب کھودنے پر گھاس کے ہے، میرے درباں کا

    خموشی میں نہاں ، خوں گشتہ* لاکھوں آرزوئیں ہیں

    چراغِ مُردہ ہوں ، میں بے زباں ، گورِ غریباں کا

    ہنوز اک “پرتوِ نقشِ خیالِ یار” باقی ہے

    دلِ افسردہ ، گویا، حجرہ ہے یوسف کے زنداں کا

    نہیں معلوم ، کس کس کا لہو پانی ہوا ہوگا

    قیامت ہے سرشک آلودہ ہونا تیری مژگاں کا

    نظر میں ہے ہماری جادۂ راہِ فنا غالبؔ

    کہ یہ شیرازہ ہے عالَم کے اجزائے پریشاں کا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    * نسخۂ حسرت موہانی میں ’سرگشتہ‘

    12۔

    نہ ہوگا “یک بیاباں ماندگی” سے ذوق کم میرا

    حبابِ موجۂ رفتار ہے نقشِ قدم میرا

    محبت تھی چمن سے لیکن اب یہ بے دماغی ہے

    کہ موجِ بوئے گل سے ناک میں آتا ہے دم میرا

    13۔

    سراپا رہنِ عشق و ناگزیرِ الفتِ ہستی

    عبادت برق کی کرتا ہوں اور افسوس حاصل کا

    بقدرِ ظرف ہے ساقی! خمارِ تشنہ کامی بھی

    جوتو دریائے مے ہے، تو میں خمیازہ ہوں ساحل کا

    14۔

    محرم نہیں ہے تو ہی نوا ہائے راز کا

    یاں ورنہ جو حجاب ہے، پردہ ہے ساز کا

    رنگِ شکستہ صبحِ بہارِ نظارہ ہے

    یہ وقت ہے شگفتنِ گل ہائے ناز کا

    تو اور سوئے غیر نظرہائے تیز تیز

    میں اور دُکھ تری مِژہ ہائے دراز کا

    صرفہ ہے ضبطِ آہ میں میرا، وگرنہ میں

    طُعمہ ہوں ایک ہی نفَسِ جاں گداز کا

    ہیں بسکہ جوشِ بادہ سے شیشے اچھل رہے

    ہر گوشۂ بساط ہے سر شیشہ باز کا

    کاوش کا دل کرے ہے تقاضا کہ ہے ہنوز

    ناخن پہ قرض اس گرہِ نیم باز کا

    تاراجِ کاوشِ غمِ ہجراں ہوا، اسدؔ!

    سینہ، کہ تھا دفینہ گہر ہائے راز کا

    15۔

    بزمِ شاہنشاہ میں اشعار کا دفتر کھلا

    رکھیو یارب یہ درِ گنجینۂ گوہر کھلا

    شب ہوئی، پھر انجمِ رخشندہ کا منظر کھلا

    اِس تکلّف سے کہ گویا بتکدے کا در کھلا

    گرچہ ہوں دیوانہ، پر کیوں دوست کا کھاؤں فریب

    آستیں میں دشنہ پنہاں، ہاتھ میں نشتر کھلا

    گو نہ سمجھوں اس کی باتیں، گونہ پاؤں اس کا بھید

    پر یہ کیا کم ہے؟ کہ مجھ سے وہ پری پیکر کھلا

    ہے خیالِ حُسن میں حُسنِ عمل کا سا خیال

    خلد کا اک در ہے میری گور کے اندر کھلا

    منہ نہ کھلنے پرہے وہ عالم کہ دیکھا ہی نہیں

    زلف سے بڑھ کر نقاب اُس شوخ کے منہ پر کھلا

    در پہ رہنے کو کہا، اور کہہ کے کیسا پھر گیا

    جتنے عرصے میں مِرا لپٹا ہوا بستر کھلا

    کیوں اندھیری ہے شبِ غم، ہے بلاؤں کا نزول

    آج اُدھر ہی کو رہے گا دیدۂ اختر کھلا

    کیا رہوں غربت میں خوش، جب ہو حوادث کا یہ حال

    نامہ لاتا ہے وطن سے نامہ بر اکثر کھلا

    اس کی امّت میں ہوں مَیں، میرے رہیں کیوں کام بند

    واسطے جس شہ کے غالبؔ! گنبدِ بے در کھلا

    16۔

    شب کہ برقِ سوزِ دل سے زہرۂ ابر آب تھا

    شعلۂ جوّالہ ہر اک حلقۂ گرداب تھا

    واں کرم کو عذرِ بارش تھا عناں گیرِ خرام

    گریے سے یاں پنبۂ بالش کفِ سیلاب تھا

    واں خود آرائی کو تھا موتی پرونے کا خیال

    یاں ہجومِ اشک میں تارِ نگہ نایاب تھا

    جلوۂ گل نے کیا تھا واں چراغاں آب جو

    یاں رواں مژگانِ چشمِ تر سے خونِ ناب تھا

    یاں سرِ پرشور بے خوابی سے تھا دیوار جو

    واں وہ فرقِ ناز محوِ بالشِ کمخواب تھا

    یاں نفَس کرتا تھا روشن، شمعِ بزمِ بےخودی

    جلوۂ گل واں بساطِ صحبتِ احباب تھا

    فرش سے تا عرش واں طوفاں تھا موجِ رنگ کا

    یاں زمیں سے آسماں تک سوختن کا باب تھا

    ناگہاں اس رنگ سے خوں نابہ ٹپکانے لگا

    دل کہ ذوقِ کاوشِ ناخن سے لذت یاب تھا

    17۔

    نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا

    تھا سپندِبزمِ وصلِ غیر ، گو بیتاب تھا

    مَقدمِ سیلاب سے دل کیا نشاط آہنگ ہے !

    خانۂ عاشق مگر سازِ صدائے آب تھا

    نازشِ ایّامِ خاکستر نشینی ، کیا کہوں

    پہلوئے اندیشہ ، وقفِ بسترِ سنجاب تھا

    کچھ نہ کی اپنے جُنونِ نارسا نے ، ورنہ یاں

    ذرّہ ذرّہ روکشِ خُرشیدِ عالم تاب تھا

    ق

    آج کیوں پروا نہیں اپنے اسیروں کی تجھے ؟

    کل تلک تیرا بھی دل مہرووفا کا باب تھا

    یاد کر وہ دن کہ ہر یک حلقہ تیرے دام کا

    انتظارِ صید میں اِک دیدۂ بیخواب تھا

    میں نے روکا رات غالبؔ کو ، وگرنہ دیکھتے

    اُس کے سیلِ گریہ میں ، گردُوں کفِ سیلاب تھا

    18۔

    ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

    خونِ جگر ودیعتِ مژگانِ یار تھا

    اب میں ہوں اور ماتمِ یک شہرِ آرزو

    توڑا جو تو نے آئینہ، تمثال دار تھا

    گلیوں میں میری نعش کو کھینچے پھرو، کہ میں

    جاں دادۂ ہوائے سرِ رہگزار تھا

    موجِ سرابِ دشتِ وفا کا نہ پوچھ حال

    ہر ذرہ، مثلِ جوہرِ تیغ، آب دار تھا

    کم جانتے تھے ہم بھی غمِ عشق کو، پر اب

    دیکھا تو کم ہوئے پہ غمِ روزگار تھا

    19۔

    بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا

    آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

    گریہ چاہے ہے خرابی مرے کاشانے کی

    در و دیوار سے ٹپکے ہے بیاباں ہونا

    واۓ دیوانگئ شوق کہ ہر دم مجھ کو

    آپ جانا اُدھر اور آپ ہی حیراں* ہونا

    جلوہ از بسکہ تقاضائے نگہ کرتا ہے

    جوہرِ آئینہ بھی چاہے ہے مژگاں ہونا

    عشرتِ قتل گہِ اہل تمنا، مت پوچھ

    عیدِ نظّارہ ہے شمشیر کا عریاں ہونا

    لے گئے خاک میں ہم داغِ تمنائے نشاط

    تو ہو اور آپ بہ صد رنگِ گلستاں ہونا

    عشرتِ پارۂ دل، زخمِ تمنا کھانا

    لذت ریشِ جگر، غرقِ نمکداں ہونا

    کی مرے قتل کے بعد اس نے جفا سے توبہ

    ہائے اس زود پشیماں کا پشیماں ہونا

    حیف اُس چار گرہ کپڑے کی قسمت غالبؔ!

    جس کی قسمت میں ہو عاشق کا گریباں ہونا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    * نسخۂ طاہر میں ” پریشاں”

    20۔

    شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا

    تا محیطِ بادہ صورت خانۂ خمیازہ تھا

    یک قدم وحشت سے درسِ دفتر امکاں کھلا

    جادہ، اجزائے دو عالم دشت کا شیرازہ تھا

    مانعِ وحشت خرامی ہائے لیلےٰ کون ہے؟

    خانۂ مجنونِ صحرا گرد بے دروازہ تھا

    پوچھ مت رسوائیِ اندازِ استغنائے حسن

    دست مرہونِ حنا، رخسار رہنِ غازہ تھا

    نالۂ دل نے دیئے اوراقِ لختِ دل بہ باد

    یادگارِ نالہ اک دیوانِ بے شیرازہ تھا

    21۔

    دوست غمخواری میں میری سعی فرمائیں گے کیا

    زخم کے بھرنے تلک ناخن نہ بڑھ جائیں گے کیا

    بے نیازی حد سے گزری بندہ پرور، کب تلک

    ہم کہیں گے حالِ دل، اور آپ فرمائیں گے ‘کیا’؟

    حضرتِ ناصح گر آئیں، دیدہ و دل فرشِ راہ

    کوئی مجھ کو یہ تو سمجھا دو کہ سمجھائیں گے کیا؟

    آج واں تیغ و کفن باندھے ہوئے جاتا ہوں میں

    عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لائیں گے کیا

    گر کیا ناصح نے ہم کو قید، اچھا یوں سہی

    یہ جنونِ عشق کے انداز چھٹ جائیں گے کیا

    خانہ زادِ زلف ہیں، زنجیر سے بھاگیں گے کیوں

    ہیں گرفتارِ وفا، زنداں سے گھبرائیں گے کیا

    ہے اب اس معمورے میں قحطِ غمِ الفت اسدؔ

    ہم نے یہ مانا کہ دلّی میں رہیں، کھائیں گے کیا؟

    22۔

    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتاا

    اگر اور جیتے رہتے ، یہی انتظار ہوتا

    ترے وعدے پر جئے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا

    کہ خوشی سے مر نہ جاتے، اگر اعتبار ہوتا

    تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا

    کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا

    کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیرِ نیم کش کو

    یہ خلش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا

    یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست نا صح

    کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا

    رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا

    جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا

    غم اگر چہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے

    غمِ عشق گر نہ ہوتا، غم روزگار ہوتا

    کہوں کس سے میں کہ کیا ہے؟شب غم بری بلا ہے

    مجھے کیا برا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا

    ہوئے مر کے ہم جو رسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا؟

    نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا

    اسے کون دیکھ سکتا، کہ یگانہ ہے وہ یکتا

    جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا

    یہ مسائل تصّوف یہ ترا بیان غالبؔ

    تجھے ہم ولی سمجھتے ،جو نہ بادہ خوار ہوتا

    23۔

    ہوس کو ہے نشاطِ کار کیا کیا

    نہ ہو مرنا تو جینے کا مزا کیا

    تجاہل پیشگی سے مدعا کیا

    کہاں تک اے سراپا ناز کیا کیا؟

    نوازش ہائے بے جا دیکھتا ہوں

    شکایت ہائے رنگیں کا گلا کیا

    نگاہِ بے محابا چاہتا ہوں

    تغافل ہائے تمکیں آزما کیا

    فروغِ شعلۂ خس یک نفَس ہے

    ہوس کو پاسِ ناموسِ وفا کیا

    نفس موجِ محیطِ بیخودی ہے

    تغافل ہائے ساقی کا گلا کیا

    دماغِ عطر پیراہن نہیں ہے

    غمِ آوارگی ہائے صبا کیا

    دلِ ہر قطرہ ہے سازِ ’انا البحر‘

    ہم اس کے ہیں، ہمارا پوچھنا کیا

    محابا کیا ہے، مَیں ضامن، اِدھر دیکھ

    شہیدانِ نگہ کا خوں بہا کیا

    سن اے غارت گرِ جنسِ وفا، سن

    شکستِ قیمتِ دل کی صدا کیا

    کیا کس نے جگرداری کا دعویٰ؟

    شکیبِ خاطرِ عاشق بھلا کیا

    یہ قاتل وعدۂ صبر آزما کیوں؟

    یہ کافر فتنۂ طاقت ربا کیا؟

    بلائے جاں ہے غالبؔ اس کی ہر بات

    عبارت کیا، اشارت کیا، ادا کیا!

    24۔

    درخورِ قہر و غضب جب کوئی ہم سا نہ ہوا

    پھر غلط کیا ہے کہ ہم سا کوئی پیدا نہ ہوا

    بندگی میں بھی وہ آزادہ و خودبیں ہیں، کہ ہم

    الٹے پھر آئے، درِ کعبہ اگر وا نہ ہوا

    سب کو مقبول ہے دعویٰ تری یکتائی کا

    روبرو کوئی بتِ آئینہ سیما نہ ہوا

    کم نہیں نازشِ ہمنامئ چشمِ خوباں

    تیرا بیمار، برا کیا ہے؟ گر اچھا نہ ہوا

    سینے کا داغ ہے وہ نالہ کہ لب تک نہ گیا

    خاک کا رزق ہے وہ قطرہ کہ دریا نہ ہوا

    نام کا میرے ہے جو دکھ کہ کسی کو نہ ملا

    کام میں میرے ہے جو فتنہ کہ برپا نہ ہوا*

    ہر بُنِ مو سے دمِ ذکر نہ ٹپکے خونناب

    حمزہ کا قِصّہ ہوا، عشق کا چرچا نہ ہوا

    قطرے میں دجلہ دکھائی نہ دے اور جزو میں کُل

    کھیل لڑکوں کا ہوا، دیدۂ بینا نہ ہوا

    تھی خبر گرم کہ غالبؔ کے اُڑیں گے پرزے

    دیکھنے ہم بھی گئے تھے، پہ تماشا نہ ہوا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    *کام کا ہے مرے وہ فتنہ کہ برپا نہ ہوا (نسخۂ حسرت، نسخۂ مہر)

    25۔

    اسدؔ ہم وہ جنوں جولاں گدائے بے سر و پا ہیں

    کہ ہے سر پنجۂ مژگانِ آہو پشت خار اپنا

    26۔

    پۓ نذرِ کرم تحفہ ہے ‘شرمِ نا رسائی’ کا

    بہ خوں غلطیدۂ صد رنگ، دعویٰ پارسائی کا

    نہ ہو’ حسنِ تماشا دوست’ رسوا بے وفائی کا

    بہ مہرِ صد نظر ثابت ہے دعویٰ پارسائی کا

    زکاتِ حسن دے، اے جلوۂ بینش، کہ مہر آسا

    چراغِ خانۂ درویش ہو کاسہ گدائی کا

    نہ مارا جان کر بے جرم، غافل!* تیری گردن پر

    رہا مانند خونِ بے گنہ حق آشنائی کا

    تمنائے زباں محوِ سپاسِ بے زبانی ہے

    مٹا جس سے تقاضا شکوۂ بے دست و پائی کا

    وہی اک بات ہے جو یاں نفَس واں نکہتِ گل ہے

    چمن کا جلوہ باعث ہے مری رنگیں نوائی کا

    دہانِ ہر” بتِ پیغارہ جُو”، زنجیرِ رسوائی

    عدم تک بے وفا چرچا ہے تیری بے وفائی کا

    نہ دے نامے کو اتنا طول غالبؔ، مختصر لکھ دے

    کہ حسرت سنج ہوں عرضِ ستم ہائے جدائی کا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    *نسخۂ حمیدیہ، نظامی، حسرت اور مہر کے نسخوں میں لفظ ’قاتل‘ ہے

    27۔

    گر نہ ‘اندوہِ شبِ فرقت ‘بیاں ہو جائے گا

    بے تکلف، داغِ مہ مُہرِ دہاں ہوجائے گا

    زہرہ گر ایسا ہی شامِ ہجر میں ہوتا ہے آب

    پر توِ مہتاب سیلِ خانماں ہوجائے گا

    لے تو لوں سوتے میں اس کے پاؤں کا بوسہ، مگر

    ایسی باتوں سے وہ کافر بدگماں ہوجائے گا

    دل کو ہم صرفِ وفا سمجھے تھے، کیا معلوم تھا

    یعنی یہ پہلے ہی نذرِ امتحاں ہوجائے گا

    سب کے دل میں ہے جگہ تیری، جو تو راضی ہوا

    مجھ پہ گویا، اک زمانہ مہرباں ہوجائے گا

    گر نگاہِ گرم فرماتی رہی تعلیمِ ضبط

    شعلہ خس میں، جیسے خوں رگ میں، نہاں ہوجائے گا

    باغ میں مجھ کو نہ لے جا ورنہ میرے حال پر

    ہر گلِ تر ایک “چشمِ خوں فشاں” ہوجائے گا

    واۓ گر میرا ترا انصاف محشر میں نہ ہو

    اب تلک تو یہ توقع ہے کہ واں ہوجائے گا

    فائدہ کیا؟ سوچ، آخر تو بھی دانا ہے اسدؔ

    دوستی ناداں کی ہے، جی کا زیاں ہوجائے گا

    28۔

    درد مِنّت کشِ دوا نہ ہوا

    میں نہ اچھا ہوا، برا نہ ہوا

    جمع کرتے ہو کیوں رقیبوں کو

    اک تماشا ہوا، گلا نہ ہوا

    ہم کہاں قسمت آزمانے جائیں

    تو ہی جب خنجر آزما نہ ہوا

    کتنے شیریں ہیں تیرے لب ،”کہ رقیب

    گالیاں کھا کے بے مزا نہ ہوا”

    ہے خبر گرم ان کے آنے کی

    آج ہی گھر میں بوریا نہ ہوا

    کیا وہ نمرود کی خدائی تھی؟

    بندگی میں مرا بھلا نہ ہوا

    جان دی، دی ہوئی اسی کی تھی

    حق تو یوں* ہے کہ حق ادا نہ ہوا

    زخم گر دب گیا، لہو نہ تھما

    کام گر رک گیا، روا نہ ہوا

    رہزنی ہے کہ دل ستانی ہے؟

    لے کے دل، “دلستاں” روانہ ہوا

    کچھ تو پڑھئے کہ لوگ کہتے ہیں

    آج غالبؔ غزل سرا نہ ہوا!

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    * نسخۂ مہر، نسخۂ علامہ آسی میں ‘یوں’ کے بجا ئے “یہ” آیا ہے

    29۔

    گلہ ہے شوق کو دل میں بھی تنگئ جا کا

    گہر میں محو ہوا اضطراب دریا کا

    یہ جانتا ہوں کہ تو اور پاسخِ مکتوب!

    مگر ستم زدہ ہوں ذوقِ خامہ فرسا کا

    حنائے پائے خزاں ہے بہار اگر ہے یہی

    دوامِ کلفتِ خاطر ہے عیش دنیا کا

    غمِ فراق میں تکلیفِ سیرِ باغ نہ دو

    مجھے دماغ نہیں خندہ* ہائے بے جا کا

    ہنوز محرمئ حسن کو ترستا ہوں

    کرے ہے ہر بُنِ مو کام چشمِ بینا کا

    دل اس کو، پہلے ہی ناز و ادا سے، دے بیٹھے

    ہمیں دماغ کہاں حسن کے تقاضا کا

    نہ کہہ کہ گریہ بہ مقدارِ حسرتِ دل ہے

    مری نگاہ میں ہے جمع و خرچ دریا کا

    فلک کو دیکھ کے کرتا ہوں اُس کو یاد اسدؔ

    جفا میں اس کی ہے انداز کارفرما کا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    *نسخۂ نظامی کی املا ہے ’خند ہاۓ‘

    30۔

    قطرۂ مے بس کہ حیرت سے نفَس پرور ہوا

    خطِّ جامِ مے سراسر رشتۂ گوہر ہوا

    اعتبارِ عشق کی خانہ خرابی دیکھنا

    غیر نے کی آہ لیکن وہ خفا مجھ پر ہوا

    31۔

    جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا

    تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا

    اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخئ ناز

    جوہرِ آئینہ کو طوطئ بسمل باندھا

    یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا

    عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا

    نہ بندھے تِشنگئ ذوق کے مضموں، غالبؔ

    گرچہ دل کھول کے دریا کو بھی ساحل باندھا

    32۔

    میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں

    گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟

    ہے ایک تیر جس میں دونوں چھِدے پڑے ہیں

    وہ دن گئے کہ اپنا دل سے جگر جدا تھا

    درماندگی میں غالبؔ کچھ بن پڑے تو جانوں

    جب رشتہ بے گرہ تھا، ناخن گرہ کشا تھا

    33۔

    گھر ہمارا جو نہ روتے بھی تو ویراں ہوتا

    بحر گر بحر نہ ہوتا تو بیاباں ہوتا

    تنگئ دل کا گلہ کیا؟ یہ وہ کافر دل ہے

    کہ اگر تنگ نہ ہوتا تو پریشاں ہوتا

    بعد یک عمرِ وَرع بار تو دیتا بارے

    کاش رِضواں ہی درِ یار کا درباں ہوتا

    34۔

    نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا

    ڈُبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

    ہُوا جب غم سے یوں بے حِس تو غم کیا سر کے کٹنے کا

    نہ ہوتا گر جدا تن سے تو زانو پر دھرا ہوتا

    ہوئی مدت کہ غالبؔ مرگیا، پر یاد آتا ہے

    وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

    35۔

    یک ذرۂ زمیں نہیں بے کار باغ کا

    یاں جادہ بھی فتیلہ ہے لالے کے داغ کا

    بے مے کِسے ہے طاقتِ آشوبِ آگہی

    کھینچا ہے عجزِ حوصلہ نے خط ایاغ کا

    بُلبل کے کاروبار پہ ہیں خندہ ہائے گل

    کہتے ہیں جس کو عشق خلل ہے دماغ کا

    تازہ نہیں ہے نشۂ فکرِ سخن مجھے

    تِریاکئِ قدیم ہوں دُودِ چراغ کا

    سو بار بندِ عشق سے آزاد ہم ہوئے

    پر کیا کریں کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا

    بے خونِ دل ہے چشم میں موجِ نگہ غبار

    یہ مے کدہ خراب ہے مے کے سراغ کا

    باغِ شگفتہ تیرا بساطِ نشاطِ دل

    ابرِ بہار خمکدہ کِس کے دماغ کا!

    36۔

    وہ میری چینِ جبیں سے غمِ پنہاں سمجھا

    رازِ مکتوب بہ بے ربطئِ عنواں سمجھا

    یک الِف بیش نہیں صقیلِ آئینہ ہنوز

    چاک کرتا ہوں میں جب سے کہ گریباں سمجھا

    شرحِ اسبابِ گرفتارئِ خاطر مت پوچھ

    اس قدر تنگ ہوا دل کہ میں زنداں سمجھا

    بدگمانی نے نہ چاہا اسے سرگرمِ خرام

    رخ پہ ہر قطرہ عرق دیدۂ حیراں سمجھا

    عجزسے اپنے یہ جانا کہ وہ بد خو ہوگا

    نبضِ خس سے تپشِ شعلۂ سوزاں سمجھا

    سفرِ عشق میں کی ضعف نے راحت طلبی

    ہر قدم سائے کو میں اپنے شبستان سمجھا

    تھا گریزاں مژۂ یار سے دل تا دمِ مرگ

    دفعِ پیکانِ قضا اِس قدر آساں سمجھا

    دل دیا جان کے کیوں اس کو وفادار، اسدؔ

    غلطی کی کہ جو کافر کو مسلماں سمجھا

    37۔

    پھر مجھے دیدۂ تر یاد آیا

    دل، جگر تشنۂ فریاد آیا

    دم لیا تھا نہ قیامت نے ہنوز

    پھر ترا وقتِ سفر یاد آیا

    سادگی ہائے تمنا، یعنی

    پھر وہ نیرنگِ نظر یاد آیا

    عذرِ واماندگی، اے حسرتِ دل!

    نالہ کرتا تھا، جگر یاد آیا

    زندگی یوں بھی گزر ہی جاتی

    کیوں ترا راہ گزر یاد آیا

    کیا ہی رضواں سے لڑائی ہوگی

    گھر ترا خلد میں گر یاد آیا

    آہ وہ جرأتِ فریاد کہاں

    دل سے تنگ آکے جگر یاد آیا

    پھر تیرے کوچے کو جاتا ہے خیال

    دلِ گم گشتہ، مگر، یاد آیا

    کوئی ویرانی سی ویرانی ہے

    دشت کو دیکھ کے گھر یاد آیا

    میں نے مجنوں پہ لڑکپن میں اسدؔ

    سنگ اٹھایا تھا کہ سر یاد آیا

    38۔

    ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا

    آپ آتے تھے، مگر کوئی عناں گیر بھی تھا

    تم سے بے جا ہے مجھے اپنی تباہی کا گلہ

    اس میں کچھ شائبۂ خوبیِ تقدیر بھی تھا

    تو مجھے بھول گیا ہو تو پتا بتلا دوں؟

    کبھی فتراک میں تیرے کوئی نخچیر بھی تھا

    قید میں ہے ترے وحشی کو وہی زلف کی یاد

    ہاں! کچھ اک رنجِ گرانباریِ زنجیر بھی تھا

    بجلی اک کوند گئی آنکھوں کے آگے تو کیا!

    بات کرتے، کہ میں لب تشنۂ تقریر بھی تھا

    یوسف اس کو کہوں اور کچھ نہ کہے، خیر ہوئی

    گر بگڑ بیٹھے تو میں لائقِ تعزیر بھی تھا

    دیکھ کر غیر کو ہو کیوں نہ کلیجا ٹھنڈا

    نالہ کرتا تھا، ولے طالبِ تاثیر بھی تھا

    پیشے میں عیب نہیں، رکھیے نہ فرہاد کو نام

    ہم ہی آشفتہ سروں میں وہ جواں میر بھی تھا

    ہم تھے مرنے کو کھڑے، پاس نہ آیا، نہ سہی

    آخر اُس شوخ کے ترکش میں کوئی تیر بھی تھا

    پکڑے جاتے ہیں فرشتوں کے لکھے پر ناحق

    آدمی کوئی ہمارا َدمِ تحریر بھی تھا؟

    ریختے کے تمہیں استاد نہیں ہو غالبؔ

    کہتے ہیں اگلے زمانے میں کوئی میر بھی تھا

    39۔

    لب خشک در تشنگی، مردگاں کا

    زیارت کدہ ہوں دل آزردگاں کا

    ہمہ نا امیدی، ہمہ بد گمانی

    میں دل ہوں فریبِ وفا خوردگاں کا

    40۔

    تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا

    اوروں پہ ہے وہ ظلم کہ مجھ پر نہ ہوا تھا

    چھوڑا مہِ نخشب کی طرح دستِ قضا نے

    خورشید ہنوز اس کے برابر نہ ہوا تھا

    توفیق بہ اندازۂ ہمت ہے ازل سے

    آنکھوں میں ہے وہ قطرہ کہ گوہر نہ ہوا تھا

    جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِ یار کا عالم

    میں معتقدِ فتنۂ محشر نہ ہوا تھا

    میں سادہ دل، آزردگیِ یار سے خوش ہوں

    یعنی سبقِ شوقِ مکرّر نہ ہوا تھا

    دریائے معاصی ُتنک آبی سے ہوا خشک

    میرا سرِ دامن بھی ابھی تر نہ ہوا تھا

    جاری تھی اسدؔ! داغِ جگر سے مری تحصیل

    آ تشکدہ جاگیرِ سَمَندر نہ ہوا تھا

    41۔

    شب کہ وہ مجلس فروزِ خلوتِ ناموس تھا

    رشتۂٴ ہر شمع خارِ کِسوتِ فانوس تھا

    مشہدِ عاشق سے کوسوں تک جو اُگتی ہے حنا

    کس قدر یا رب! ہلاکِ حسرتِ پابوس تھا

    حاصلِ الفت نہ دیکھا جز شکستِ آرزو

    دل بہ دل پیوستہ، گویا، یک لبِ افسوس تھا

    کیا کروں بیمارئِ غم کی فراغت کا بیاں

    جو کہ کھایا خونِ دل، بے منتِ کیموس تھا

    42۔

    آئینہ دیکھ، اپنا سا منہ لے کے رہ گئے

    صاحب کو دل نہ دینے پہ کتنا غرور تھا

    قاصد کو اپنے ہاتھ سے گردن نہ ماریے

    اس کی خطا نہیں ہے یہ میرا قصور تھا

    43۔

    ضعفِ جنوں کو وقتِ تپش در بھی دور تھا

    اک گھر میں مختصر سا بیاباں ضرور تھا

    44۔

    فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں

    نہیں رفتارِ عمرِ تیز رو پابندِ مطلب ہا

    45۔

    عرضِ نیازِ عشق کے قابل نہیں رہا
    جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا
    جاتا ہوں داغِ حسرتِ ہستی لیے ہوئے
    ہوں شمعِ کشتہ درخورِ محفل نہیں رہا
    مرنے کی اے دل اور ہی تدبیر کر کہ میں
    شایانِ دست و خنجرِ قاتل نہیں رہا
    بر روۓ شش جہت درِ آئینہ باز ہے
    یاں امتیازِ ناقص و کامل نہیں رہا
    وا کر دیے ہیں شوق نے بندِ نقابِ حسن
    غیر از نگاہ اب کوئی حائل نہیں رہا
    گو میں رہا رہینِ ستم ہاے روزگار
    لیکن ترے خیال سے غافل نہیں رہا
    دل سے ہوائے کشتِ وفا مٹ گئی کہ واں
    حاصل سواے حسرتِ حاصل نہیں رہا
    بیدادِ عشق سے نہیں ڈرتا مگر اسدؔ
    جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا

    46۔

    رشک کہتا ہے کہ اس کا غیر سے اخلاص حیف!
    عقل کہتی ہے کہ وہ بے مہر کس کا آشنا
    ذرّہ ذرّہ ساغرِ مے خانۂ نیرنگ ہے
    گردشِ مجنوں بہ چشمک‌ہاے لیلیٰ آشنا
    شوق ہے “ساماں طرازِ نازشِ اربابِ عجز”
    ذرّہ صحرا دست گاہ و قطرہ دریا آشنا
    میں اور ایک آفت کا ٹکڑا وہ دلِ وحشی، “کہ ہے
    عافیت کا دشمن اور آوارگی کا آشنا”
    شکوہ سنجِ رشکِ ہم دیگر نہ رہنا چاہیے
    میرا زانو مونس اور آئینہ تیرا آشنا
    کوہکن” نقّاشِ یک تمثالِ شیریں” تھا اسدؔ
    سنگ سے سر مار کر ہووے نہ پیدا آشنا

    47۔

    ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا

    بن گیا رقیب آخر۔ تھا جو رازداں اپنا

    مے وہ کیوں بہت پیتے بز مِ غیر میں یا رب

    آج ہی ہوا منظور اُن کو امتحاں اپنا

    منظر اک بلندی پر اور ہم بنا سکتے

    عرش سے اُدھر ہوتا، کاشکے مکاں اپنا

    دے وہ جس قد ر ذلت ہم ہنسی میں ٹالیں گے

    بارے آشنا نکلا، ان کا پاسباں، اپنا

    در دِ دل لکھوں کب تک، جاؤں ان کو دکھلادوں

    انگلیاں فگار اپنی، خامہ خونچکاں اپنا

    گھستے گھستے مٹ جاتا، آپ نے عبث بدلا

    ننگِ سجدہ سے میرے، سنگِ آستاں اپنا

    تا کرے نہ غمازی، کرلیا ہے دشمن کو

    دوست کی شکایت میں ہم نے ہمزباں اپنا

    ہم کہاں کے دانا تھے، کس ہنر میں یکتا تھے

    بے سبب ہوا غالبؔ دشمن آسماں اپنا

    48۔

    سرمۂ مفتِ نظر ہوں مری قیمت* یہ ہے

    کہ رہے چشمِ خریدار پہ احساں میرا

    رخصتِ نالہ مجھے دے کہ مبادا ظالم

    تیرے چہرے سے ہو ظاہر غمِ پنہاں میرا

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    * نسخۂ آگرہ، منشی شیو نارائن، 1863ء میں’مری قسمت‘

    49۔

    غافل بہ وہمِ ناز خود آرا ہے ورنہ یاں

    بے شانۂ صبا نہیں طُرّہ گیاہ کا

    بزمِ قدح سے عیشِ تمنا نہ رکھ، کہ رنگ

    صید ز دام جستہ ہے اس دام گاہ کا

    رحمت اگر قبول کرے، کیا بعید ہے

    شرمندگی سے عذر نہ کرنا گناہ کا

    مقتل کو کس نشاط سے جا تا ہو ں میں، کہ ہے

    پُرگل خیالِ زخم سے دامن نگاہ کا

    جاں در” ہواۓ یک نگہِ گرم” ہے اسدؔ

    پروانہ ہے وکیل ترے داد خواہ کا

    50۔

    جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا
    کہتے ہیں ہم تجھ کو منہ دکھلائیں کیا
    رات دن گردش میں ہیں سات آسماں
    ہو رہے گا کچھ نہ کچھ گھبرائیں کیا
    لاگ ہو تو اس کو ہم سمجھیں لگاؤ
    جب نہ ہو کچھ بھی تو دھوکا کھائیں کیا
    ہو لیے کیوں نامہ بر کے ساتھ ساتھ
    یا رب اپنے خط کو ہم پہنچائیں کیا
    موجِ خوں سر سے گزر ہی کیوں نہ جائے
    آستانِ یار سے اٹھ جائیں کیا
    عمر بھر دیکھا کیے مرنے کی راہ
    مر گیے پر دیکھیے دکھلائیں کیا
    پوچھتے ہیں وہ کہ غالبؔ کون ہے
    کوئی بتلاؤ کہ ہم بتلائیں کیا

    51۔

    لطافت بےکثافت جلوہ پیدا کر نہیں سکتی

    چمن زنگار ہے آئینۂ بادِ بہاری کا

    حریفِ جوششِ دریا نہیں خوددارئ ساحل

    جہاں ساقی ہو تو باطل ہے دعویٰ ہوشیاری کا

    52۔

    عشرتِ قطرہ ہے دریا میں فنا ہو جانا

    درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا

    تجھ سے، قسمت میں مری، صورتِ قفلِ ابجد

    تھا لکھا بات کے بنتے ہی جدا ہو جانا

    دل ہوا کشمکشِ چارۂ زحمت میں تمام

    مِٹ گیا گھِسنے میں اُس عُقدے کا وا ہو جانا

    اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم اللہ اللہ

    اس قدر دشمنِ اربابِ وفا ہو جانا

    ضعف سے گریہ مبدّل بہ دمِ سرد ہوا

    باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا

    دِل سے مِٹنا تری انگشتِ حنائی کا خیال

    ہو گیا گوشت سے ناخن کا جُدا ہو جانا

    ہے مجھے ابرِ بہاری کا برس کر کھُلنا

    روتے روتے غمِ فُرقت میں فنا ہو جانا

    گر نہیں نکہتِ گل کو ترے کوچے کی ہوس

    کیوں ہے گردِ رہِ جَولانِ صبا ہو جانا

    تاکہ تجھ پر کھُلے اعجازِ ہواۓ صَیقل

    دیکھ برسات میں سبز آئنے کا ہو جانا

    بخشے ہے جلوۂ گُل، ذوقِ تماشا غالبؔ

    چشم کو چاہۓ ہر رنگ میں وا ہو جانا

    53۔

    شکوۂ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا

    غالبؔ ایسے گنج کو عیاں یہی ویرانہ تھا

    54۔

    پھر وہ سوۓ چمن آتا ہے خدا خیر کرے

    رنگ اڑتا ہے گُلِستاں کے ہواداروں کا

    55۔

    اسدؔ! یہ عجز و بے سامانئِ فرعون توَام ہے

    جسے تو بندگی کہتا ہے دعویٰ ہے خدائی کا

    56۔

    ؁ 1857ء

    بس کہ فعّالِ ما یرید ہے آج

    ہر سلحشور انگلستاں کا

    گھر سے بازار میں نکلتے ہوۓ

    زہرہ ہوتا ہے آب انساں کا

    چوک جس کو کہیں وہ مقتل ہے

    گھر بنا ہے نمونہ زنداں کا

    شہرِ دہلی کا ذرّہ ذرّہ خاک

    تشنۂ خوں ہے ہر مسلماں کا

    کوئی واں سے نہ آ سکے یاں تک

    آدمی واں نہ جا سکے یاں کا

    میں نے مانا کہ مل گۓ پھر کیا

    وہی رونا تن و دل و جاں کا

    گاہ جل کر کیا کیۓ شکوہ

    سوزشِ داغ ہاۓ پنہاں کا

    گاہ رو کر کہا کیۓ باہم

    ماجرا دیدہ ہاۓ گریاں کا

    اس طرح کے وصال سے یا رب

    کیا مٹے داغ دل سے ہجراں کا

    57۔

    بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شوخی اہتمام اس کا

    نگیں میں جوں شرارِ سنگ نا پیدا ہے نام اس کا

    مِسی آلود ہے مُہرنوازش نامہ ظاہر ہے

    کہ داغِ آرزوۓ بوسہ دیتا ہے پیام اس کا

    بامیّدِ نگاہِ خاص ہوں محمل کشِ حسرت

    مبادا ہو عناں گیرِ تغافل لطفِ عام اس کا

    58۔

    عیب کا دریافت کرنا، ہے ہنرمندی اسدؔ

    نقص پر اپنے ہوا جو مطلعِ، کامل ہوا

    59۔

    شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیرے، دل بے تاب تھا

    شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا

    واں ہجومِ نغمہ ہاۓ سازِ عشرت تھا اسدؔ

    ناخنِ غم یاں سرِ تارِ نفس مضراب تھا

    60۔

    دود کو آج اس کے ماتم میں سیہ پوشی ہوئی

    وہ دلِ سوزاں کہ کل تک شمع، ماتم خانہ تھا

    شکوۂ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا

    غالبؔ ایسے کنج کو شایاں یہی ویرانہ تھا

  56. çã×æ¿Ü ÂýÎðàæ ¥ŠæèÙSÍ âðßæ°´ ¿ØÙ ÕæðÇü mæÚæ çÜç· ÂæðSÅ ·æðÇ 0171 ·ð ÂÎæð´ ·æð ÖÚÙð ·ð çÜ° 29 Ùß´ÕÚ ¥æØæðçÁÌ ·è »§ü À´ÅÙè ÂÚèÿææ ·æ ÂçÚ‡ææ× ƒææðçáÌ ·Ú çÎØæ »Øæ ãñÐ ÕæðÇü âç¿ß °¿¥æÚ àæ×æü Ùð ÕÌæØæ ç· ¥zØÍèü ¥ÂÙæ ÂçÚ‡ææ× ÕæðÇü ·è ßðÕâæ§Å ÂÚ Öè Îð¹ â·Ìð ãñ´Ð âÈÜ ¥zØçÍüØæð´ ·ð ÚæðÜ Ù´ÕÚ §â Âý·æÚ ãñ´vÜ·ü (ÂæðSÅ ·æðÇ 0171)
    63007 63008 63027 63029 63034 63039 63040 63044 63045 63048

    63056 63066 63071 63075 63076 63080 63090 63098 63099 63112

    63120 63122 63131 63132 63139 63146 63165 63167 63185 63191

    63197 63221 63223 63225 63235 63247 63260 63266 63267 63276

    63288 63312 63327 63353 63355 63363 63365 63366 63379 63382

    63400 63403 63404 63418 63426 63429 63430 63442 63452 63459

    63461 63475 63480 63486 63489 63490 63493 63494 63499 63504

    63510 63512 63515 63516 63528 63541 63547 63548 63553 63554

    63576 63585 63591 63606 63615 63622 63635 63637 63641 63644

    63651 63656 63660 63663 63669 63677 63678 63682 63684 63687

    63691 63696 63699 63702 63705 63712 63715 63719 63741 63742

    63743 63747 63749 63750 63754 63758 63773 63788 63806 63828

    63840 63841 63846 63859 63861 63876 63887 63917 63921 63934

    63936 63940 63941 63943 63944 63945 63949 63951 63956 63957

    63958 63959 63960 63971 63975 63977 63980 63984 63991 63997

    64075 64076 64088 64089 64090 64101 64112 64118 64119 64143

    64145 64159 64173 64193 64194 64199 64206 64216 64237 64244

    64254 64257 64306 64314 64316 64317 64322 64344 64347 64350

    64370 64383 64389 64400 64405 64424 64428 64443 64474 64541

    64551 64568 64577 64581 64582 64597 64601 64604 64605 64612

    64613 64618 64637 64657 64686 64691 64696 64698 64699 64700

    64705 64711 64717 64722 64730 64732 64733 64736 64738 64742

    64743 64761 64763 64769 64822 64831 64850 64860 64861 64890

    64894 64900 64901 64911 64916 64919 64965 64986 65009 65010

    65015 65020 65023 65024 65025 65027 65028 65045 65058 65063

    65082 65096 65104 65117 65118 65119 65121 65122 65123 65124

    65125 65126 65127 65129 65148 65149 65150 65152 65153 65154

    65162 65172 65177 65185 65197 65200 65201 65203 65226 65237

    65244 65250 65251 65253 65255 65268 65278 65288 65297 65316

    65321 65322 65324 65341 65343 65344 65375 65405 65409 65417

    65426 65427 65429 65432 65437 65439 65440 65511 65512 65528

    65564 65566 65584 65588 65591 65592 65596 65600 65612 65616

    65627 65640 65641 65661 65668 65669 65682 65691 65696 65698

    65709 65717 65727 65738 65746 65754 65761 65765 65791 65804

    65814 65828 65849 65853 65859 65863 65876 65880 65892 65921

    65923 65946 65992 65993 66011 66017 66030 66049 66059 66072

    66097 66101 66110 66113 66117 66118 66127 66128 66129 66130

    66131 66137 66142 66157 66158 66163 66169 66172 66177 66178

    66179 66180 66182 66186 66226 66248 66255 66261 66264 66272

    66273 66276 66319 66329 66340 66350 66351 66404 66413 66420

    66426 66428 66436 66450 66466 66483 66491 66512 66606 66615

    66621 66650 66653 66660 66675 66676 66677 66687 66689 66695

    66717 66730 66742 66767 66775 66785 66791 66836 66837 66838

    66841 66863 66869 66882 66893 66910 66918 66928 66944 66946

    66960 66965 66970 66973 66989 66990 67010 67043 67059 67068

    67082 67083 67084 67088 67099 67101 67102 67104 67105 67106

    67110 67115 67123 67124 67127 67138 67155 67159 67167 67176

    67177 67205 67208 67213 67237 67241 67242 67246 67253 67299

    67305 67322 67363 67383 67384 67387 67389 67397 67417 67432

    67456 67457 67458 67463 67465 67468 67475 67486 67487 67488

    67549 67568 67571 67574 67579 67597 67599 67607 67621 67628

    67637 67640 67658 67659 67661 67662 67670 67673 67680 67686

    67698 67709 67712 67713 67729 67731 67732 67808 67819 67824

    67826 67827 67833 67851 67872 67873 67902 67916 67922 67926

    67936 67939 67941 67942 67944 67992 68009 68012 68014 68023

    68036 68039 68051 68063 68064 68065 68070 68110 68113 68159

    68163 68234 68242 68245 68248 68249 68266 68272 68273 68274

    68276 68277 68280 68286 68288 68310 68322 68326 68348 68372

    68391 68394 68397 68398 68424 68444 68449 68456 68464 68465

    68481 68492 68510 68531 68551 68555 68562 68566 68582 68586

    68592 68594 68596 68603 68604 68611 68613 68617 68623 68625

    68636 68653 68664 68674 68695 68703 68704 68708 68709 68716

    68720 68729 68733 68744 68746 68749 68754 68755 68758 68765

    68769 68772 68782 68788 68791 68803 68806 68809 68819 68820

    68821 68830 68843 68855 68856 68857 68859 68863 68864 68865

    68869 68908 68910 68915 68962 68974 68982 69004 69015 69023

    69028 69029 69046 69079 69080 69112 69119 69120 69127 69128

    69132 69141 69149 69152 69155 69156 69179 69203 69206 69216

    69225 69231 69245 69257 69282 69290 69297 69299 69303 69328

    69329 69330 69337 69344 69352 69353 69355 69375 69385 69387

    69396 69409 69424 69432 69441 69442 69468 69469 69470 69473

    69476 69478 69481 69483 69489 69491 69493 69501 69505 69515

    69524 69563 69564 69587 69588 69593 69597 69617 69623 69640

    69642 69650 69669 69671 69673 69675 69680 69689 69697 69704

    69714 69721 69734 69735 69753 69760 69761 69765 69767 69775

    69778 69865 69866 69872 69874 69875 69898 69900 69905 69932

    69950 69952 69964 69987 70000 70013 70036 70037 70038 70043

    70111 70113 70122 70125 70126 70136 70169 70190 70193 70239

    70264 70272 70299 70309 70313 70324 70327 70328 70338 70343

    70358 70361 70371 70395 70409 70426 70448 70457 70460 70463

    70471 70474 70484 70489 70499 70519 70525 70543 70546 70547

    70552 70553 70559 70565 70573 70600 70605 70607 70610 70640

    70643 70645 70646 70648 70650 70662 70668 70670 70686 70695

    70710 70727 70749 70750 70759 70763 70774 70782 70787 70788

    70795 70806 70813 70816 70819 70831 70833 70860 70879 70892

    70898 70918 70929 70941 70943 70984 70995 70996 71009 71014

    71020 71047 71073 71082 71089 71098 71108 71115 71124 71128

    71133 71142 71145 71146 71149 71158 71160 71174 71188 71200

    71214 71217 71220 71221 71222 71232 71244 71246 71247 71249

    71262 71365 71368 71370 71374 71383 71405 71406 71408 71409

    71417 71425 71432 71435 71442 71446 71449 71451 71457 71462

    71463 71473 71475 71476 71477 71479 71494 71496 71499 71537

    71540 71556 71558 71559 71575 71592 71596 71673 71681 71687

    71689 71694 71695 71696 71702 71707 71712 71714 71717 71722

    71723 71724 71729 71735 71740 71742 71746 71757 71759 71763

    71766 71768 71777 71782 71801 71802 71803 71814 71825 71834

    71836 71847 71852 71860 71863 71877 71885 71889 71893 71906

    71920 71926 71929 71945 71952 71954 71955 71961 71967 71968

    71982 71989 71997 72001 72011 72018 72024 72028 72033 72047

    72050 72068 72070 72075 72083 72090 72094 72096 72098 72101

    72115 72123 72130 72133 72141 72143 72151 72163 72185 72191

    72201 72202 72205 72207 72214 72221 72223 72226 72228 72239

    72264 72268 72270 72273 72276 72281 72282 72290 72295 72309

    72310 72313 72318 72320 72324 72329 72340 72341 72348 72350

    72364 72375 72387 72396 72411 72417 72428 72451 72452 72456

    72459 72461 72465 72471 72479 72484 72487 72489 72502 72503

    72514 72520 72530 72531 72533 72534 72546 72550 72555 72558

    72568 72582 72591 72602 72608 72637 72642 72657 72659 72678

    72686 72689 72690 72693 72694 72698 72709 72727 72729 72732

    72733 72758 72759 72765 72767 72780 72785 72788 72805 72809

    72822 72823 72830 72834 72851 72857 72863 72865 72874 72877

    72880 72884 72890 72894 72895 72965 72966 72978 72986 73007

    73026 73074 73079 73085 73125 73130 73139 73143 73149 73158

    73166 73181 73183 73188 73201 73206 73209 73215 73221 73235

    73257 73258 73268 73286 73302 73303 73306 73319 73320 73322

    73329 73349 73392 73424 73425 73426 73437 73440 73443 73477

    73495 73500 73501 73521 73522 73523 73537 73544 73548 73573

    73627 73637 73666 73674 73680 73702 73707 73714 73715 73716

    73735 73739 73740 73767 73781 73782 73807 73812 73818 73821

    73833 73852 73885 73887 73894 73906 73935 73958 73961 73967

    73968 73986 73989 73998 74006 74018 74020 74036 74051 74052

    74060 74081 74091 74097 74099 74113 74126 74136 74140 74146

    74159 74179 74186 74197 74198 74209 74221 74235 74253 74271

    74276 74277 74284 74301 74306 74339 74348 74375 74414 74418

    74421 74431 74440 74449 74453 74455 74461 74480 74484 74488

    74569 74571 74579 74589 74598 74612 74614 74620 74651 74664

    74688 74694 74697 74700 74709 74742 74743 74747 74751 74752

    74759 74766 74767 74769 74790 74802 74813 74816 74818 74821

    74830 74834 74838 74839 74840 74857 74868 74887 74896 74901

    74943 74964 74969 74970 74984 75002 75011 75017 75025 75042

    75055 75075 75078 75097 75116 75151 75181 75215 75219 75220

    75242 75248 75253 75255 75298 75303 75338 75344 75352 75363

    75370 75379 75396 75423 75424 75427 75441 75443 75449 75451

    75458 75470 75474 75490 75491 75502 75503 75529 75553 75576

    75582 75584 75605 75614 75634 75635 75642 75643 75646 75658

    75683 75709 75714 75724 75739 75748 75783 75801 75809 75810

    75811 75817 75818 75819 75820 75831 75834 75839 75840 75843

    75846 75851 75865 75866 75867 75878 75903 75921 75922 75938

    75945 75952 75954 75961 75975 75991 76001 76013 76026 76027

    76046 76073 76075 76083 76084 76091 76101 76102 76116 76117

    76124 76126 76128 76129 76132 76133 76144 76158 76171 76172

    76178 76189 76197 76201 76210 76215 76216 76219 76227 76228

    76245 76246 76259 76276 76288 76289 76290 76296 76298 76300

    76301 76310 76323 76328 76341 76357 76358 76365 76379 76383

    76385 76395 76396 76400 76405 76423 76426 76429 76430 76452

    76455 76463 76464 76474 76496 76498 76506 76511 76521 76539

    76541 76546 76552 76562 76573 76575 76585 76681 76689 76702

    76711 76718 76730 76731 76732 76733 76736 76738 76751 76754

    76761 76763 76766 76767 76773 76774 76787 76793 76806 76808

    76822 76823 76824 76825 76826 76827 76828 76831 76841 76850

    76854 76861 76862 76867 76886 76890 76891 76893 76921 76925

    76926 76938 76946 76954 76958 76970 76972 76978 76982 77016

    77017 77019 77022 77032 77040 77044 77046 77049 77052 77077

    77078 77092 77118 77120 77140 77143 77152 77157 77166 77168

    77177 77197 77198 77204 77216 77217 77222 77225 77231 77236

    77260 77273 77278 77289 77295 77299 77301 77307 77308 77309

    77310 77324 77331 77335 77345 77356 77363 77368 77375 77377

    77383 77384 77395 77403 77407 77410 77411 77412 77421 77424

    77425 77438 77463 77466 77477 77486 77489 77501 77515 77526

    77534 77542 77547 77548 77565 77568 77571 77574 77595 77597

    77613 77614 77622 77629 77635 77654 77657 77669 77682 77703

    77704 77710 77719 77722 77727 77741 77768 77774 77775 77783

    77789 77791 77820 77827 77830 77835 77847 77848 77852 77877

    77885 77888 77892 77895 77899 77911 77925 77929 77930 77935

    77937 77944 77949 77951 77953 77954 77961 77962 77963 77970

    77971 77976 77977 77978 77986 77988 77999 78005 78009 78013

    78015 78025 78033 78046 78051 78057 78065 78068 78069 78071

    78072 78076 78088 78095 78131 78135 78142 78144 78147 78148

    78149 78151 78154 78156 78159 78163 78168 78178 78207 78209

    78210 78213 78214 78250 78256 78257 78274 78282 78302 78316

    78321 78334 78336 78389 78395 78396 78401 78416 78433 78434

    78435 78446 78451 78454 78471 78476 78490 78491 78493 78508

    78515 78522 78535 78541 78545 78555 78556 78567 78580 78583

    78585 78596 78613 78616 78622 78631 78643 78645 78652 78665

    78679 78680 78687 78688 78713 78716 78730 78732 78737 78762

    78804 78826 78835 78843 78857 78879 78883 78888 78891 78899

    78903 78913 78925 78939 78946 78948 78963 78965 78970 78978

    78991 79014 79054 79058 79076 79079 79080 79083 79096 79097

    79099 79109 79114 79140 79151 79164 79165 79167 79168 79171

    79173 79175 79197 79220 79259 79277 79281 79282 79286 79287

    79289 79317 79328 79338 79341 79354 79367 79389 79391 79392

    79401 79405 79411 79443 79449 79482 79497 79508 79511 79524

    79525 79526 79534 79537 79539 79544 79545 79548 79562 79571

    79577 79582 79590 79615 79617 79621 79623 79625 79631 79632

    79642 79647 79657 79663 79666 79667 79679 79681 79682 79690

    79695 79698 79701 79707 79708 79719 79720 79729 79731 79732

    79737 79738 79741 79744 79750 79754 79779 79785 79788 79793

    79794 79804 79815 79816 79825 79832 79834 79845 79850 79855

    79869 79870 79876 79891 79894 79896 79901 79912 79931 79932

    79941 79942 79950 79951 79958 79970 79972 79978 79991 80021

    80022 80042 80055 80057 80143 80150 80158 80164 80175 80179

    80182 80186 80203 80206 80219 80261 80266 80268 80278 80279

    80287 80291 80297 80302 80305 80313 80332 80346 80355 80356

    80360 80365 80369 80399 80410 80429 80441 80455 80475 80516

    80539 80563 80579 80597 80608 80618 80636 80639 80655 80663

    80725 80727 80733 80737 80739 80741 80763 80771 80782 80798

    80813 80831 80832 80849 80864 80873 80874 80883 80885 80888

    80889 80897 80899 80900 80918 80919 80933 80947 80948 80954

    80957 80991 80997 81000 81002 81003 81004 81008 81014 81016

    81019 81021 81024 81036 81042 81043 81049 81051 81052 81054

    81056 81064 81074 81077 81087 81092 81093 81095 81100 81109

    81121 81145 81146 81158 81162 81164 81166 81175 81185 81200

    81214 81223 81224 81230 81238 81270 81281 81310 81312 81328

    81337 81350 81364 81367 81379 81395 81414 81423 81427 81429

    81450 81472 81473 81487 81489 81509 81510 81530 81531 81541

    81544 81559 81565 81574 81577 81607 81623 81633 81637 81641

    81651 81652 81657 81661 81662 81672 81678 81692 81695 81699

    81704 81705 81707 81732 81733 81735 81745 81756 81764 81771

    81776 81780 81781 81790 81802 81822 81824 81830 81832 81835

    81838 81839 81840 81841 81849 81851 81860 81861 81862 81863

    81872 81881 81884 81886 81889 81890 81891 81892 81900 81902

    81917 81986 81987 82000 82002 82013 82035 82038 82058 82066

    82079 82090 82102 82152 82159 82160 82161 82181 82192 82193

    82200 82207 82220 82226 82230 82231 82235 82237 82238 82241

    82251 82253 82256 82259 82263 82264 82266 82287 82302 82324

    82330 82337 82342 82343 82344 82349 82357 82368 82370 82378

    82387 82397 82402 82404 82410 82411 82427 82443 82447 82448

    82452 82465 82473 82480 82490 82492 82493 82541 82554 82555

    82590 82598 82603 82609 82649 82656 82660 82677 82692 82706

    82710 82750 82760 82766 82767 82774 82780 82798 82804 82807

    82828 82849 82852 82861 82864 82872 82879 82882 82932 82937

    82946 82952 82959 82964 82967 82973 83027 83040 83051 83052

    83058 83063 83064 83070 83077 83078 83084 83085 83096 83102

    83132 83139 83156 83172 83190 83193 83194 83196 83200 83218

    83220 83222 83224 83232 83249 83262 83267 83270 83283 83287

    83291 83294 83300 83305 83308 83326 83327 83341 83345 83346

    83360 83365 83371 83375 83394 83406 83408 83409 83415 83420

    83430 83445 83448 83451 83462 83474 83477 83487 83488 83491

    83495 83509 83522 83526 83555 83557 83561 83575 83591 83595

    83614 83617 83619 83622 83636 83637 83654 83658 83672 83686

    83784 83789 83800 83801 83811 83821 83827 83829 83861 83902

    83913 83914 83922 83926 83930 83936 83937 83944 83962 83964

    83965 83976 83977 83992 84015 84027 84031 84046 84057 84063

    84066 84077 84081 84088 84108 84119 84131 84138 84140 84141

    84142 84143 84148 84165 84194 84197 84229 84231 84234 84236

    84254 84255 84259 84260 84273 84281 84310 84318 84320 84330

    84350 84353 84354 84355 84356 84378 84387 84395 84396 84401

    84403 84416 84427 84429 84454 84458 84478 84497 84499 84508

    84509 84532 84538 84545 84548 84554 84559 84560 84563 84564

    84585 84611 84645 84646 84668 84671 84679 84685 84697 84707

    84710 84727 84743 84754 84758 84759 84771 84774 84800 84813

    84817 84819 84821 84822 84830 84847 84850 84864 84868 84877

    84878 84885 84903 84904 84905 84914 84916 84925 84928 84946

    84951 84957 84964 84968 84980 84999 85081 85082 85099 85113

    85122 85132 85135 85136 85137 85149 85155 85166 85177 85178

    85184 85196 85206 85208 85209 85212 85213 85215 85220 85225

    85229 85233 85239 85246 85248 85280 85281 85298 85304 85310

    85318 85342 85358 85361 85370 85373 85378 85383 85387 85389

    85390 85405 85417 85420 85421 85424 85427 85440 85446 85449

    85453 85455 85464 85467 85468 85470 85476 85481 85482 85490

    85491 85518 85521 85528 85534 85539 85543 85553 85558 85561

    85565 85569 85574 85575 85578 85599 85600 85618 85623 85627

    85630 85639 85641 85643 85644 85671 85686 85688 85702 85713

    85714 85721 85727 85731 85733 85743 85762 85799 85802 85803

    85804 85806 85813 85820 85823 85825 85829 85830 85833 85840

    85843 85844 85845 85846 85849 85858 85860 85861 85862 85865

    85866 85868 85877 85878 85881 85883 85884 85885 85886 85888

    85891 85892 85893 85894 85900 85901 85904 85905 85911 85918

    85920 85924 85925 85932 85936 85941 85946 85949 85950 85952

    85953 85955 85960 85963 85965 85972 85983 86000 86001 86004

    86006 86007 86008 86081 86082 86085 86101 86115 86129 86141

    86151 86158 86161 86163 86166 86168 86175 86184 86185 86199

    86204 86212 86228 86252 86255 86261 86268 86285 86294 86298

    86316 86324 86345 86367 86382 86384 86398 86401 86408 86426

    86443 86444 86449 86475 86476 86495 86503 86533 86536 86553

    86557 86562 86563 86564 86569 86573 86582 86584 86599 86603

    86610 86613 86617 86628 86629 86631 86632 86635 86638 86655

    86656 86675 86681 86705 86708 86713 86717 86718 86725 86726

    86729 86732 86734 86748 86756 86765 86768 86776 86816 86824

    86826 86845 86868 86871 86884 86886 86901 86908 86919 86953

    86961 87046 87098 87101 87103 87104 87123 87136 87142 87147

    87157 87158 87161 87169 87176 87192 87213 87214 87232 87331

    87332 87338 87341 87351 87357 87369 87376 87380 87384 87385

    87388 87403 87409 87412 87420 87433 87435 87438 87441 87454

    87463 87467 87482 87491 87505 87511 87523 87564 87565 87569

    87577 87581 87596 87600 87617 87632 87671 87674 87691 87695

    87703 87711 87716 87765 87777 87810 87812 87824 87835 87840

    87846 87854 87856 87868 87881 87889 87908 87911 87915 87945

    87967 87971 87992 88000 88026 88027 88034 88039 88050 88057

    88066 88079 88115 88128 88135 88138 88169 88176 88177 88194

    88232 88250 88298 88300 88302 88310 88347 88373 88380 88402

    88404 88405 88453 88467 88472 88478 88483 88573 88574 88586

    88600 88622 88648 88671 88728 88740 88746 88758 88764 88765

    88777 88798 88809 88830 88837 88850 88876 88878 88885 88890

    88896 88906 88922 88923 88947 88971 88976 88989 89004 89012

    89021 89032 89080 89097 89102 89106 89111 89112 89113 89127

    89134 89137 89145 89151 89159 89167 89188 89212 89221 89228

    89229 89238 89265 89266 89273 89290 89291 89302 89307 89311

    89347 89348 89355 89371 89376 89377 89378 89387 89412 89416

    89422 89451 89457 89463 89471 89481 89505 89508 89518 89530

    89546 89549 89550 89581 89585 89638 89650 89660 89710 89721

    89726 89729 89744 89745 89750 89766 89778 89779 89791 89801

    89807 89811 89824 89856 89890 89909 89910 89913 89928 89939

    89947 89959 89961 89963 89966 89972 89995 89996 90038 90051

    90063 90066 90068 90075 90095 90103 90110 90117 90120 90122

    90206 90209 90236 90268 90283 90291 90310 90314 90327 90331

    90340 90345 90355 90364 90372 90373 90377 90384 90388 90419

    90476 90510 90544 90548 90561 90563 90576 90586 90588 90611

    90623 90624 90656 90686 90708 90709 90712 90719 90739 90748

    90753 90823 90836 90847 90867 90889 90901 90915 90918 90922

    90943 90967 90975 91014 91016 91022 91024 91057 91085 91087

    91114 91130 91132 91167 91171 91172 91174 91202 91206 91224

    91225 91228 91268 91273 91274 91277 91294 91306 91312 91314

    91326 91328 91330 91334 91335 91343 91344 91348 91370 91372

    91377 91381 91384 91385 91386 91391 91392 91408 91409 91429

    91446 91447 91457 91465 91471 91479 91480 91485 91489 91500

    91513 91522 91536 91538 91540 91547 91559 91587 91588 91589

    91592 91609 91618 91625 91638 91651 91665 91695 91699 91713

    91720 91727 91741 91758 91765 91769 91819 91820 91821 91844

    91848 91861 91884 91885 91899 91920 91933 91970 91987 92005

    92014 92015 92033 92055 92059 92060 92064 92068 92071 92077

    92090 92098 92131 92181 92190 92200 92219 92231 92253 92283

    92296 92298 92305 92312 92314 92337 92339 92383 92390 92401

    92417 92423 92437 92456 92498 92499 92504 92537 92603 92608

    92616 92617 92633 92636 92637 92668 92669 92675 92676 92689

    92699 92713 92735 92737 92753 92758 92759 92765 92771 92772

    92777 92779 92780 92782 92785 92793 92804 92830 92835 92840

    92841 92842 92876 92877 92886 92895 92899 92911 92922 92923

    92927 92941 92947 92974 92986 92995 92996 93005 93028 93029

    93030 93046 93070 93121 93140 93141 93155 93157 93168 93170

    93175 93188 93197 93206 93216 93245 93248 93250 93255 93290

    93293 93300 93309 93322 93332 93373 93382 93385 93387 93388

    93391 93392 93429

  57. جطوري عزيزم؟؟

  58. مسلمانوں کی مسیحائی کا دعویٰ کر نے والے وزیر اعلی نتیش کمار نے بڑے شاطرانہ انداز میں اس قوم کوگرم مسالہ کی طرح استعمال کیا ہے ۔ گودھرا جیسے حادثے کو نظر انداز کر بھاگل پور واقعہ کو سیاسی طور پر کیش والے نتیش کمار اب مسلمانوں کے بربادی کے ذمہ دار نریندر مودی سے نفرت کا ڈھونگ کر رہے ہےں ۔ کیا انہےں معلوم نہےں تھا کہ وہ بی جے پی کی گود میں بیٹھ کر حکومت کر رہے ہےں ۔ ہمیشہ انہوں نے بی جے پی کی بیساکھی کا سہارا لیا اور اب جب انتخاب قریب ہے ان کو لگا کہ ان کی دوستی ظاہر ہو گئی تو انہوں نے ڈھونگ شروع کر دیا ۔ آج نریندر مودی ان کے لئے نفرت کا سبب بن گئے ہےں ۔ گودھرا حادثہ کے وقت وہ کہاں تھے ۔ مسلم مسیحا نتیش کمار نے اس دوران گجرات کے خاک و خون ہو چکے مسلمانوں کی خبر گیری تک نہےں کی ۔ اپنے مفاد کے لئے بظاہر وہ ریاست کے مسلمانوں کے لئے دریا دل ہو گئے ۔ اس وقت ان کی ہمدردی کہاں تھی ۔ گودھرا حادثہ کے دوران وہ وزیر ریل تھے ۔ انہوں نے جائے حادثہ پر جانا تک گوارہ نہےں کیا ۔اس وقت ان کی ذمہ داری زیادہ تھی کیوں نہےں انہوں نے جانچ کرائی اور جب جانچ کرائی گئی تو اس کو بھی مجروح کر نے کی کوشش کی ۔ آر ایس ایس کے اشارے پر ہمیشہ چلنے والے نتیش کمار نے مسلمانوں کو میٹھا زہر دے دیا ہے ۔ کیا مسلمانوں کو ٹھگنے والے بہروپیا اور ان کے تعریف میں زمین آسمان کے قلابے ملانے والے دلال قسم کے مسلم رہنما قوم کو کب تک بے وقوف بناتے رہیں گے ۔ دن رات نتیش کمار کا قصیدہ پرھ کر اپنے مفاد میں سیدھے سادے مسلمانوں کو سوچی سمجھی سازش کا شکار بناتے رہیں گے؟۔ کب تک قوم کے ساتھ غداری ہو تی رہے گی ؟۔جتنا نتیش کمار ذمہ دار ہےں اس سے کہیں زیادہ ان کی تعریف کے پل باندھنے والے نام نہاد مسلم رہنما ذمہ دار ہےں ۔ قوم ان کو کبھی معاف نہےں کرے گی ۔ ریاست میں مسلمانوں کی حالت گزشتہ 20سالوں سے بھی بدتر ہو گئی ہے ۔ ان 4سالوں میں مسلمان بدترین سازش کے شکار ہوئے ہےں۔ مسلمانوں کے لئے مرکز کے ذریعہ دئے جانے والے فلاحی پیسوں کو بڑی خوبصورتی سے بیکار کر دیا گیا ۔ مسلم اکثریت اضلاع کی ہمہ جہت ترقی کے لئے دیا گیا 697 کروڑ روپیہ 2سالوں تک مسلسل واپس کیا گیا جس سے ریاست کے ان 7اضلاع کے 50لاکھ سے زیادہ مسلمانوں کا بہت بڑا نقصان ہوا ۔ وہ فلاح سے کوسوں دور ہو گئے ۔ وزیر اعلی نے 2007 میں ”مکھیہ منتری شرم شکتی“ منصوبہ کا اعلان کیا تھا جو اب تک شروع نہےں ہوسکا ۔ جب یہ اپنا منصوبہ نہےں چلا سکے تو دوسرے منصوبوں کا کیا حشر ہوا ہو گا۔ کیا وزیر اعلی جواب دے سکتے ہےں ؟ ۔ بے سہارا مظلوم ”طلاق شدہ عورتوں کی امداد کے لئے جو سالانہ 2کروڑ کا بجٹ تھا اس کو ان کے اشارے پر محکمہ اقلیتی فلاح کے سکریٹری نے 50لاکھ کر دیا ۔ گزشتہ 3برسوں میں نہےں کے برابر مسلمانوں کو اقلیتی لون دیا گیا ہے ۔ مرکز کے فلاحی منصوبے بیکار پڑے ہےں ۔ ”میرٹ کم منس“ ،پر ی میٹرک‘ ، ’پوسٹ میٹرک ‘ مسلمانوں کو مفت کوچنگ دینے کا منصوبہ سب بیکار پڑے ہوئے ہےں ۔ اب اساتذہ بحالی کے لئے ایک نیا کھیل کھیلا گیا ۔ میٹرک پاس بی ٹی کا نہ مسلمانوں میں میٹرک پاس بی ٹی ملیںگے نہ نوکری ملے گی ”سانپ بھی مرجائے اور لاٹھی بھی نہ ٹوٹے “ والی پالیسی پر عمل کر نے والے نتیش کمار نے بہارکو بد عنوانی سے پاک کر نے کا اعلان کیا مگر اس کے خلاف عمل کیا بدعنوان افسروں کی پشت پناہی کی گئی ۔بد عنوانی کو آشکار کر نے والے کو ہی راستے سے ہٹا دیا جاتا ہے ۔ مدرسہ بورڈ کی حالت بدترین صورت اختیار کر چکی ہے ۔اقلیتی کمیشن دلالی کا اڈہ بن کر رہ گیا ہے ۔ اس کمیشن نے آج تک کوئی رپورٹ پیش نہےں کی ۔ نتیش کمار اعلان سے زیادہ کچھ نہےں کر سکے ۔ بدعنوانی کا عالم یہ ہے کہ ہر تیسرا غریب بدحال ہو رہا ہے ۔ ، نریگا ، اندرا آواس ، جواہر روزگار جیسے منصوبوں میں لوٹ مچی ہوئی ہے ۔ قانون ساز کونسل اور راجیہ سبھا میں مسلمانوں کو انگوٹھا دکھا دیا گیا ۔ سالوں تک بی جے پی کی گود میں بیٹھ کر سیاست کر نے والے بہروپیہ نتیش کمار نے نریندر مودی سے نفرت کا ناٹک کر سیکولر ہو نے اور مسلمانوں کی مسیحائی کا جو کھیل شروع کیا ہے اس کا راز فاش ہو چکا ہے ۔ ان کو اب لگنے لگا ہے کہ اب ان کی سیاسی زمین سکڑ چکی ہے ۔ انہوں نے صرف مسلمانوں کو ہی نہیں بلکہ بہار کے عوام کو بھی دھوکہ دیا ہے ۔ انہوں نے اپنے چہیتے افسران کو لوٹ کی کھلی چھوٹ دے رکھی ہے ۔ یہ بہار اور بہاریوں سے ہمدردی نہےں بلکہ غداری ہے ۔ گجرات کی عوام کا پیسہ واپس کر نا بہار کے لئے بدنما داغ ہے ۔ اب مصیبت کے وقت کوئی مدد نہےں کرے گا ۔ اپنے مفاد کے لئے نتیش کمار کچھ بھی کر سکتے ہےں ۔ یہ بہار کے لئے سیاہ باب ہے ۔
    ۔ مسلمانان بہار سے : ہماری آبادی 18فیصد ہے پھر بھی ہم کسی لائق نہےں ۔ ہمیں اپنی طاقت پہچاننی ہو گی ۔ آزادی کے 62سالوں کے بعد بھی ہماری حالت بد سے بدترین ہو تی جا رہی ہے ۔ آج تمام سیاسی پارٹیاں اور نام نہاد مسلم رہنما ہمیں بہروپیوں کے ہاتھوں کا کھلونا بنا کر رکھا ہے ۔ اب وقت آ گیا ہے کہ ہمیں اپنی قوت کا مظاہرہ کر نا ہو گا ۔ ہم بار بار استعمال ہو تے رہے ہےں ۔

  59. آپ کیسے ہیں


एक उत्तर दें

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / बदले )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / बदले )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / बदले )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / बदले )

Connecting to %s

श्रेणी

%d bloggers like this: